بابری مسجد انہدام کیس: اڈوانی، جوشی، اوما کے خلاف مقدمہ چلے گا- سماعت ہر روز ہوا کریگی، متعلقہ ججوں کی تبدیلی نہیں ہوگی، کیس کو دو سال میں مکمل کرنا ہوگا: سپریم کورٹ

19 اپريل 2017 (06:41)

نئی دہلییو این آئی سپریم کورٹ نے ایودھیا میں متنازعہ ڈھانچے کو منہدم کیے جانے کے معاملے میں بھارتیہ جنتا پارٹی ﴿بی جے پی﴾ کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی، مسٹر مرلی منوہر جوشی اور محترمہ اوما بھارتی سمیت 12رہنماؤں کے خلاف مجرمانہ سازش کا مقدمہ چلانے کا کل حکم دیا۔ جسٹس پناکی چندر گھوش اور جسٹس روھگٹن ایف نریمن کی بنچ نے اس معاملے میں مرکزی تفتیشی بیورو ﴿سی بی آئی﴾ کی اپیل قبول کرتے ہوئے یہ حکم دیا۔ بینچ کی جانب سے جسٹس نریمن نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا، ’’ہم الہ آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف سی بی آئی کی اپیل قبول کرتے ہیں اور اس سلسلے میں کچھ ہدایات جاری کرتے ہیں‘‘۔ کورٹ نے راجستھان کے گورنر مسٹر کلیان سنگھ کے خلاف فی الحال الزام طے نہ کرنے کا حکم دیا۔ بینچ نے کہا کہ مسٹر سنگھ گورنر کے آئینی عہدے پر فائز ہیں اور جب تک وہ اس عہدے سے ہٹ نہیں جاتے اس وقت تک ان کے خلاف الزامات طے نہیں کئے جائیں گے ۔ مسٹر اڈوانی، مسٹر جوشی اور محترمہ بھارتی کے علاوہ جن لیڈروں کے خلاف مقدمے چلائے جائیں گے ان میں بی جے پی ممبر پارلیمنٹ ونے کٹیار، سادھوی رتمبھرا، ستیش پردھان اور سی آر بنسل شامل ہیں۔ اس صورت میں لکھنؤ اور رائے بریلی دونوں جگہوں پر مختلف مقدمے چل رہے تھے۔ لکھنؤ میں نامعلوم کارسیوکوں کے خلاف جبکہ رائے بریلی میں مسٹر اڈوانی وغیرہ رہنماؤں کے خلاف مقدمے چل رہے ہیں۔ ان لیڈروں پر اشتعال انگیز تقریر کے ذریعے کارسیوکوں کو بابری مسجد منہدم کرنے کیلئے اُکسانے کے الزامات ہیں۔ بنچ نے رائے بریلی میں جاری مقدمے کو چار ہفتوں کے اندر اندر لکھنؤ منتقل کرنے کا حکم دیا۔عدالت نے کہا کہ سماعت روز انہ چلے گی اور اسے دو سال میں مکمل کرنا ہوگا۔ سی بی آئی اس بات کو یقینی بنائے گی کہ استغاثہ کا ایک گواہ بیان درج کرنے کیلئے سماعت کے دوران نچلی عدالت میں موجود ہو۔ معاملے میں فیصلہ سنائے جانے تک سماعت کرنے والے ججوں کے تبادلے نہیں کئے جائیں گے ۔ عدالت نے کہا کہ اس کے احکامات پر بعینہ عمل کیا جانا چاہئے ۔ اس نے واضح کیا کہ اگر کسی پارٹی کو ایسا لگتا ہے کہ عدالت کے ہدایات پر عمل نہیں کیا جا رہا ہے تو اسے عدالت عظمی کا دروازہ کھٹکھٹانے کی چھوٹ ہوگی۔ گزشتہ چھ اپریل کو بنچ نے فیصلہ محفوظ رکھ لیا تھا۔ نچلی عدالت نے ان لیڈروں کو مجرمانہ سازش کے الزامات سے بری کر دیا تھا، جسے الہ آباد ہائی کورٹ نے 21مئی 2010کو برقرار رکھا تھا۔ اس کے بعد سی بی آئی نے عدالت کی پناہ لی تھی۔

تبصرے