کشمیر کی موجودہ صورتحال پراقوام متحدہ کا اظہار تشویش- سیکریٹری جنرل کی طرف سے بھارت اورپاکستان پر مذاکراتی عمل فوری طور شروع کرنے پر زور

12 اپريل 2017

نیویارک /اقوام متحدہ نے’’مسئلہ کشمیرکوپُرامن طورحل کرنے کی پُرزور وکالت‘‘کرتے ہوئے بھارت اورپاکستان پرمذاکراتی عمل بحال کرنے پرزوردیاہے ۔سیکرٹری جنرل کے ترجمان اسٹیفن ڈوجارک نے واضح کیاکہ اینٹونیوگونترس کشمیرمسئلے اورکشمیرکی صورتحال پربات کرنے سے گریزاں نہیں ہیں ۔ اقوام متحدہ نے پھرایک مرتبہ کشمیرکی موجودہ صورتحال پرتشویش ظاہرکرتے ہوئے اسبات پرزوردیاہے کہ مسئلہ کشمیرکوپُرامن طورحل کرنے کیلئے بھارت اورپاکستان کوملکراقدامات اُٹھانے چاہیں ۔اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل اینٹونیوگونترس کے ترجمان اسٹیفن ڈوجارک نے یواین ہیڈکوارٹرپرمعمول کی پریس بریفنگ کے دوران کہاکہ اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل کشمیرکی صورتحال پرنظررکھے ہوئے ہیں ،اوروہ چاہتے ہیں کہ بھارت اورپاکستان کشمیرکے مسئلے کوپُرامن طورمذاکرات کے ذریعے حل کرنے کی کوشش کریں ۔کشمیرکی موجودہ صورتحال کے حوالے سے ایک نامہ نگارکی جانب سے پوچھے گئے سوال کاجواب دیتے ہوئے اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل کے ترجمان کاواضح طورکہناتھاکہ اینٹونیوگونترس کشمیرمسئلے اورکشمیرکی صورتحال پربات کرنے سے گریزاں نہیں ہیں بلکہ وہ وہاں کی صورتحال پرگہری نظررکھے ہوئے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ یہ تاثرغلط ہے کہ سیکرٹری جنرل کشمیرمسئلے اوروہاں کی صورتحال پربات کرنے سے گریزکررہے ہیں ۔انہوں نے واضح کیاکہ اقوام متحدہ بھارت اورپاکستان پرزوردیتاآرہاہے کہ وہ کشمیرکے مسئلے کوباہمی طورمذاکرات کے ذریعے حل کریں۔اسٹیفن ڈوجارک کاکہناتھاکہ سیکرٹری جنرل اینٹونیوگونترس بھارت اورپاکستان کے درمیان رابطے اورمکالمے پرزوردیتے آئے ہیں ،اوراب بھی سیکرٹری جنرل یہی چاہتے ہیں کہ دونوں ملک باہمی رابطے اورمکالمے کے ذریعے مسئلہ کشمیرکاحل نکالنے کی کوشش کریں ۔ایک سوال کے جواب میں اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل کاکہناتھاکہ کشمیرمسئلے اورکشمیرکی صورتحال کے حوالے سے سیکرٹری جنرل کاجوپہلے موقف تھا،اب بھی وہی ہے ،یعنی بھارت اورپاکستان مذاکرات کے ذریعے اس مسئلے کاحل تلاش کریں ۔کشمیرمیں جاری صورتحال کے حوالے سے ایک نامہ نگارکی جانب سے پوچھے گئے اس سوال کہ سیکرٹری جنرل اسبارے میں کیارائے رکھتے ہیں ، اینٹونیوگونترس کے ترجمان اسٹیفن ڈوجارک نے پھرواضح کیاکہ وہاں کی صورتحال کے بارے میں جوکچھ پہلے کہاگیا،ہم اُسی پرقائم ہیں ۔انہوں نے پھرایک مرتبہ کہاکہ سیکرٹری جنرل اینٹونیوگونترس کشمیرکی صورتحال پرگہری نظررکھے ہوئے ہیں ،اوروہاں کے حالات کے بارے میں جانکاری لیتے رہتے ہیں ۔اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل کے ترجمان نے واضح کیاکہ بلاشبہ کشمیرایک مسئلہ ہے اوروہاں پیداہونے والی صورتحال پربھی ایک مسئلہ ہے ،جس پرسیکرٹری جنرل نظررکھے ہوئے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ اگرہم مزیدکچھ کہنے کے اہل ہونگے توہم تب ہی کچھ کہیں گے ۔خیال رہے پرتگال کے سابق وزیراعظم اینٹونیوگونترس نے یکم جنوری 2017 کواپنے پیش رئوبانکی مون سے اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل کاعہدہ سنبھالنے کے بعدسے کئی مرتبہ ہندوپاک کے درمیان جاری سفارتی اورسرحدی کشیدگی کے ساتھ ساتھ مسئلہ کشمیراورکشمیرمیں پیداہونے والی صورتحال پررائے زنی کی ۔انہوں نے رواں برس کے اوئل اورگزشتہ دنوں یہ بھی واضح کردیاکہ اقوام متحدہ بھارت اورپاکستان کے مابین ثالث بننے کیلئے تیارہے ،اگردونوں ملک اس کیلئے آمادہ ہوں ۔پاکستان کی جانب سے حسب روایت اقوام متحدہ سیکرٹری جنرل کے بیان اورپیشکش کاخیرمقدم کیاگیاجبکہ بھارت اپنے اس موقف پرقائم رہاکہ پاک بھارت تعلقات اورکشمیرمسئلے میں تیسرے فریق کاکوئی رول نہیں ۔بھارت اسبات پراٹل ہے کہ کشمیرکامسئلہ اسکااندرونی معاملہ ہے ،اورپاکستان کیساتھ بات چیت یامذاکرات میں کسی تیسرے فریق کی ثالثی کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔

تبصرے