ہیومن رائٹس کمیشن نے لالچوک میں پانی جمع ہونے کا سخت نوٹس لیا

سرینگر/ جے کے این ایس /سٹیٹ ہیومن رائٹس کمیشن نے سرینگر میونسپل کارپوریشن کو نوٹس اجرا کرتے ہوئے لالچوک اور اُس کے ملحقہ علاقوں میں پانی جمع ہونے کے ضمن میں اپنی پوزیشن واضح کرنے کے احکامات صادر کئے۔ہیومن رائٹس کمیشن نے سوموار کے روز شنوائی کی تاریخ مقرر کی ہے۔ معمولی بوندا باندی کے ساتھ ہی /جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
شہر سرینگر میں سیلابی صورتحال پیدا ہونے کا سٹیٹ ہیومن رائٹس کمیشن نے سخت نوٹس لیتے ہوئے متعلقین کو نوٹسیں اجرا کیں ہیں۔ سٹیٹ ہیومن رائٹس کمیشن میں محمد احسن انتو نے پٹیشن دائر کرتے ہوئے بتایا کہ سرینگر میونسپل کارپوریشن شہر سرینگر میں پانی کے نکاس کو یقینی بنانے کیلئے مکمل طورپر ناکام ثابت ہو گیا ہے۔درخواست گزار کا مزید کہنا تھا کہ شہر سرینگر کے لالچوک ، ہری سنگھ ہائی اسٹریٹی ، ریگل چوک ، پلیڈیم گلی ، پولیو ویو ، ایم اے روڑ ، کرسو ، راجباغ ، جواہر نگر ، لل دید اسپتال ، رعناواری اور اولڈ برزلہ میں معمولی بارشوں کے ساتھ ہی سیلابی صورتحال پیدا ہو جاتی ہے اور پانی دکانوں کے اندر گھس جاتا ہے جس کے باعث لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے۔  ہیومن رائٹس کمیشن نے معاملے کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے میونسپل کارپوریشن کو نوٹس اجرا کرتے ہوئے سوموار کے روز کمیشن میں حاضر ہونے کا فرمان جاری کیا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں