نہتے اور معصوم عوام پر تشدد کے بڑھتے واقعات اقوام متحدہ کا انسانی حقوق کمیشن وادی کا دورہ کریں:گیلانی

سرینگر//حریت چیرمین گ سید علی گیلانی نے اقوامِ متحدہ سے وابستہ انسانی حقوق کمیشن کی ہائی کمشنر مائیکل بیچلیٹ کی طرف سے بھارت کی افواج اور انتظامیہ کے ہاتھوں جموں کشمیر کی سرزمین پر انسانی حقوق کی بدترین پامالیوں کا سنجیدہ نوٹس لیتے ہوئے بھارت کی جوابدہی طلب کئے جانے کی سراہنا کرتے ہوئے کہا کہ اقوامِ متحدہ کے حقوق انسانی کمیشن کو ریاست جموں کشمیر کا ازخود دورہ کرکے بھارت کی افواج اور ایجنسیوں کے ہاتھوں انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں کا تفصیلی جائزہ لینا چاہیے۔ حریت راہنما نے ریاستی عوام کی طرف سے حقِ خودارادیت کے جمہوری اور سیاسی مطالبے کی پاداش میں بھارت کے افواج اور فاشسٹ انتظامیہ کی طرف سے یہاں کے عوام کو حقِ زندگی سے محروم کئے جانے کے علاوہ جملہ حقوق انسانی کی محرومیت کا مسئلہ درپیش ہے۔ ریاست جموں کشمیر میں نہتے اور معصوم عوام کو دن دھاڑے وردی پوش اور ان کے غیر وردی پوش معاون اہلکار گرفتار کرکے شدید جسمانی اذیتیں پہنچانے کا ارتکاب کرتے ہیں۔ انہیں زیرِ حراست انتہائی بے دردی کے ساتھ قتل کیا جاتا ہے۔ ان کی لاشیں گلی کوچوں یا سنسان مقامات پر پھینک دیتے ہیں یا گم نام قبروں میں دفن کرکے انہیں گمشدگی کے کھاتے میں درج کرتے ہیں۔ سیاسی انتقام گیری کے تحت تحریک حقِ خودارادیت کے ساتھ وابستہ سیاسی راہنماؤں اور عام کارکنوں کو قتل کرنا، جیلوں، پولیس تھانوں اور انٹروگیشن مراکز میں دوران حراست ناقابل بیان جسمانی تشدد کا شکار بنانا ریاست جموں کشمیر میں ایک معمول بن گیا ہے۔ سول آبادی کے خلاف ان کی ناپسند کے باوجود انہیں بھارت نواز سیاسی عمل میں شریک ہونے کے لیے جان لیوا جبرواکراہ کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اپنے جائز حقوق کے لیے پُرامن مظاہرین پر فوجی طاقت کا بے تحاشا استعمال، گولی باری اور پیلٹ گن کے چھروں سے ہزاروں کی تعداد میں عام لوگوں مردوزن اور اطفال کو جسمانی طور ناخیز اور آنکھوں کی روشنی سے محروم ہونا پڑتا ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں