پیٹرول کی قیمتیں بڑھ جانے سے مہنگائی عروج پر عام لوگوں کی زندگی اجیرن ،انتظامیہ گراں فروشوں پر لگام کسنے میںپوری طرح ناکام

سر ینگر/ اے پی آ ئی/ڈیزل اور پیٹرول کی قیمتیں بڑھ جانے کے ساتھ ہی وادی میں مہنگائی عروج پر ، کھانے پینے کی اشیائ اور تعمیراتی سامان کی قیمتوں میں بے تحاشا اضافہ ہوا ہے جس کی وجہ سے متوسط اور غریبی کی سطح سے نیچے زندگی بسر کرنے والے کنبوں کی زندگی اجیرن بن گئی ہے ،قیمتوں کو اعتدا ل پر رکھنے کے بارے میں انتظامیہ کے دعوے زمینی سطح پر کھولے ثابت ۔ خام تیل کی قیمتیں بڑھ جانے کے بعد ریاست خاصکر وادی کشمیر میں کھانے پینے کی اشیائ ،تعمیراتی سامان کی قیمتوںمیں حد سے زیادہ اضافہ ہوا ہے جس کی وجہ سے عام لوگوں کی زندگی اجیرن بن کر رہ گئی ہے ۔ ناجائز منافع خوروں نے وادی کے اطراف واکناف میں لوٹ کھسوٹ کا ایسا سلسلہ شروع کیا ہے جس کی کئی مثال نہیں پا رہی ہے ، امور صارفین و عوامی تقسیم کاری محکمہ کی جانب سے کھاے پینے کی اشیائ فروخت کرنے کیلئے جو ریٹ لسٹ مقررہ کیا گیا ہے وہ کئی دکھائی نہیں دے رہا ہے ، کریانہ فروشی ،سبزی بیچنے والوں اور میوہ فروشوں نے خود قیمتیں مقرر کی ہیں اور من مانی ریٹ کے مطابق اشیائ فروخت کرتے ہیں ،تعمیراتی سامان جن میں اینٹ ،پتھر ،ریت ،باجری،لوہا ،کیل ،سیمنٹ ، عمارتی لکڑی وغیرہ کی قیمتوںمیں اس قدر اضافہ کیا گیا ہے جو عام انسان کے دست راست سے باہر ہے ۔ حکومت کی جانب سے بڑھتی ہوئی قیمتوں کو کم کرنے اور قیمتوںکو اعتدال پر رکھنے کے بارے میں کارروائیاں عمل میں لانے سے اس بات کی عکاسی ہو تی ہے کہ ریاستی انتظامیہ کو زمینی صورتحال کے بارے میں میں کوئی جانکاری نہیں ہے اور وہ یہ سمجھ بیٹھے ہیں کہ ہزاروں روپے کی تنخواہیں حاصل کر کے عیش و عشرت کی زندگی گزارتے ہیں عام لوگ بھی اسی طرح سے دن کاٹ رہے ہیں انہیں اس بات کا احساس نہیں کہ غریب کنبوں کے منہ سے نوالہ چھین گیا ہے وہ اپنی زندگی کے دن کاٹنے میںمشکلات کا سامنا کر رہے ہیں انہیں نہ صرف مہنگائی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے بلکہ سہولیات کی عدم دسیتابی نے بھی انہیں زندہ رہنے کا بہت کم موقعہ فراہم کیا ہے ۔ قانونی ادارے بھی خواب غفلت میں پڑے ہوئے ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں