کٹھوعہ میں جنسی استحصال کے الزام میںپادر ی گرفتار ہوسٹل سے 20کمسن بچے بچیاں بازیاب

جموں،8ستمبر﴿یو این آئی﴾ ماہ جنوری2018میں آٹھ سالہ معصوم بچی کی اجتماعی آبروریزی اور قتل معاملہ سے عالمی سطح پر شہ سرخیاں بننے والے جموں وکشمیرریاست کے ضلع کٹھوعہ میں جنسی زیادتی کا ایک اور سنسنی خیز معاملہ سامنے آیاہے۔ضلع کٹھوعہ کے ‘پارلی بنڈ‘میں انسانیت کو شرمسار کردینے والے اس معاملہ میں ضلع انتظامیہ اور پولیس کی مشترکہ کارروائی میں گرجاگھر کے نام پر چلائے جارہے غیر اندراج شدہ ہوسٹل سے کم سے کم 20کمسن بچے بچیوں کو نکال کر بال آشرم ناری نکیتن منتقل کیاگیاہے۔حکام کے مطابق کٹھوعہ قصبہ کے پارلی بنڈ علاقہ میں گرجا گھر کے نام پر بنائے گئے رہائشی ہوسٹل میں کم سن بچوں اور بچیوں کے ساتھ دست درازی کی متعدد شکایات موصول ہوئیں تھیں، جن کا نوٹس لیتے ہوئے ضلع ترقیاتی کمشنر کٹھوعہ کی ہدایات پر اسسٹنٹ کمشنر ریونیو جتندر مشرا کی قیادت میں پولیس اور سول انتظامیہ کی ٹیم نے جمعہ کی شام اس عمارت پر چھاپہ مارا اور لگ بھگ دو گھنٹوں تک تلاشی مہم جاری رہی ۔بچوں سے پوچھ تاچھ کے بعد اس ہوسٹل کے منتظم’انٹی تھومس‘کو حراست میں لے لیاگیا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں