میرواعظ کی جانب سے خانہ نظر بندی کی خلاف ورزی کی کوشش پولیس نے ناکام بنادی

تصویر: سہیل حمید

سرینگر//﴿آفتاب ویب ڈیسک﴾پولیس نے آج سینئر مزاحمتی رہنما میر واعظ عمر فاروق کی جانب سے انکی خانہ نظربندی کو توڑنے کی کوشش اُس وقت ناکام بنادی جب وہ سرینگر کے نگین علاقے میں واقع اپنی رہائش گاہ سے باہر نکل کرشوپیاں جانے کی کوشش کررہے تھے۔ پولیس اس موقعے کو میر واعظ کو واپس اپنے گھر کے اندر جانے پر مجبور کردیا۔ قابل ذکر ہے کہ اتوار کی رات جنوبی ضلع شوپیاں میں فوج کے ہاتھوں دو جنگجوئوں اور چار عام شہریوں کی ہلاکت کے بعد سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک پر مشمل مشترکہ مزاحمتی قیادت نے آج ’’شوپیاں چلو‘‘ کی کال دیتے ہوئے عوام سے آج متاثرہ کنبوں کے ساتھ اظہار تعزیت اور اظہار یکجہتی کرنے کے لئے شوپیاں پہنچنے کی اپیل کی تھی ۔ تاہم حکام نے آج صبح سے ہی سرینگر شہر کے حساس علاقوں میں بھاری تعداد میں فورسز کو تعینات کرکے لوگوں کی نقل و حرکت مسدود بنادی جبکہ میر واعظ کو پہلے ہی ان کے گھر میں نظر بند کردیا گیا اور محمد یٰسین ملک کو گرفتار کرکے سرینگر سینٹرل جیل بھیج دیا گیا۔قابل ذکر ہے کہ سید علی گیلانی طویل عرصے سے خانہ نظربند ہیں۔ آج جب پولیس نے میر واعظ کو ان کی خانہ نظربندی کی کی خلاف ورزی سے روکا تو اس موقعے پر موجود صحافیوں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایک طرف فورسز آرمڈ فورسز سپیشل پائورس ایکٹ ﴿افسپا﴾ کے تحت حاصل بے پناہ اختیارات کو استعمال کرتے ہوئے لوگوں کو مار رہی ہے اور دوسری جانب مزاحمتی لیڈرشب کو متاثرہ کنبوں کے ساتھ اظہار تعزیت کرنے سے بھی روکا جارہا ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں