کنٹرول لائن پر گولہ باری پر نیشنل کانفرنس کااظہار تشویش

سرینگر//نیشنل کانفرنس نے سرحدوں پر جاری گولہ باری کا سلسلہ وسیع سے وسیع تر ہونے پر زبردست تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ خونی لکیر پر جاری گن گرج اب وادی تک پہنچ گئی ہے اور کپوارہ کے سرحدی علاقوں اور اوڑی میں گذشتہ چند دنوں سے جنگ کا سماں ہے۔ پارٹی کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ اور کاگذار صدر عمر عبداللہ نے حد متارکہ کے آر پار جاری کشیدگی کو بدقسمتی سے تعبیر کرتے ہوئے کہا ہے کہ آئے روز سرحدوں پر گولہ باری معمول بن کر رہ گیا ہے لیکن دونوں ملکوں کی حکومتیں یہ سنگین رجحان اور موت کا رقص روکنے کیلئے سنجیدہ دکھائی نہیں دے رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آئے روز آر پار گولہ باری سے بے گناہ لوگ مارے جارہے ہیں۔ معصوم زخمی ہورہے ہیں اور مال مویشی بھی متاثر ہورہے ہیں۔ لائن آف کنٹرول اور سرحد پر آر پار فائرنگ اور گولہ باری سے متاثرہ آبادیوں کی کسمپری اور ناگفتہ بہہ حالت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے لیڈران نے کہا ہے کہ وادی ضلع کپوارہ اور بارہمولہ کے سرحدی علاقے کرناہ ، ٹنگڈار اور اوڑی میں اپنے گھر بار چھوڑ کر ہجرت کرنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آئے روز گولہ باری کی وجہ سے سرحدی آبادی کے سر پر موت کا سایہ ہمیشہ منڈلارہا ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں