کمپنی ترمیمی بل پر پارلیمنٹ کی مہر

نئی دہلی/یواین آئی/ معیشت کو رفتار دینے کے مقصد سے ملک میں کمپنیوں کے کاروباری طریقہ کار اور ضوابط کے نفاذ کو آسان بنانے کی تجاویز والے کمپنی ﴿ترمیمی﴾ بل، 2017 کو راجیہ سبھا میں کل صوتی ووٹوں سے منظور کئے جانے کے ساتھ ہی اس پر پارلیمنٹ کی مہر لگ گئی۔ پارلیمنٹ کے مانسون اجلاس میں لوک سبھا میں یہ بل منظور ہو گیا تھا۔ راجیہ سبھا نے کل اس بل کو صوتی ووٹوں سے منظوری دی۔ اس طرح اس پر پارلیمنٹ کی منظوری مل گئی۔ بل کے ذریعے کمپنیوں کے طریقہ کار اور قوانین پر عمل کے ضمن میں کمپنی ایکٹ 2013 کے قوانین میں ترمیمات کی گئی ہیں۔ نئی تجاویز کے تحت جہاں کمپنیوں کے لئے کاروباری طریقہ کار کی پیچیدگی ختم کی گئی ہے ، وہیں سرمایہ کاروں کے تحفظ کا بھی پختہ انتظام کیا گیا ہے تاکہ مارکیٹ اور معیشت پر ان کا اعتماد قائم رہے ۔ کمپنیوں کو کاروباری سہولتیں دینے کے ساتھ ہی قوانین پر عمل نہیں کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی تجویز بھی دی گئی ہے ۔ بل پر بحث کا جواب دیتے ہوئے کمپنی امور کے وزیر مملکت پی پی چودھری نے کہا کہ کمپنی قانون 2013 میں ترمیم کر کے اس قانون پر عمل کو آسان بنایا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قوانین کے مطابق منافع کے دو فیصد حصے کو سی ایس آر کے تحت اخراجات نہیں کرنے والی 180 کمپنیوں کو نوٹس جاری کئے گئے ہیں اور جو کمپنی اس اصول پر عمل نہیں کرے گی اس کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں