کنہ دجن بڈگام امتحانی مرکز میں افرا تفری دو طلباکو بے ہوشی کی حالت میں ہسپتال لے جایا گیا
 پرچے وقت سے پہلے ہی چھین لئے گئے کئی طلباکے پرچے پھاڑ ڈالے گئے ،نگراں عملے پر سنگین الزامات

سرینگر/جے کے این ایس /کنہ دجن پکھر پورہ امتحانی مراکز میں اُس وقت افرا تفری کاماحول پھیل گیا جب طلبا و طالبات کے پرچے وقت سے پہلے ہی چھین لئے گئے جس کی وجہ سے کئی طالبات بے ہوش ہو گئیں۔ معلوم ہوا ہے کہ ایک طالب علم کا پرچہ پھاڑ ڈالا گیا اور اُس کو اسپتال منتقل کرنا پڑا۔ لواحقین اور طلبہ و طالبات نے پولیس اسٹیشن میں سپرانٹنڈنٹ کے خلاف شکایت درج کی ۔ پکھر پورہ ہائر اسکنڈری میں زیر تعلیم طلبہ وطالبات کو چار کلومیٹر مسافت طے کرکے کنہ دجن میں امتحانی مرکز رکھا گیا ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ امتحان کے دوران طلبہ وطالبات کے پرچے وقت سے پہلے ہی چھین لئے گئے اور اس دوران ایک طالب علم کا پرچہ ہی پھاڑ ڈالا گیا ۔ نمائندے کے مطابق جونہی پرچے کے دو حصے ہوئے طالب علم پر غشی طاری ہوئی اور اُس کو اسپتال منتقل کرناپڑا۔ ایک اور طالبہ کا بھی پرچہ پھاڑ ڈالا گیا اور اُس کو بھی اسپتال منتقل کرناپڑا۔ لواحقین نے بتایا کہ امتحانی مراکز پر تعینات عملہ کا مظاہرہ کر رہا ہے اور والدین نے اس سلسلے میں پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کی ہے۔ اس ضمن میں جب سپر انٹنڈنٹ طاریق ایوب کے ساتھ رابط قائم کیا تو اُن کا کہنا تھا انہیں اب دوسری جگہ تبدیل کیا گیا ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں