لیبیا کی فوج نے بن غازی سے جنگجوؤں کو بھگادیا

بن غازی/مشرقی لیبیامیں فوج نے عسکریت پسندوں کو ان کے آخری گڑھ اور ملک کے دوسرے سب سے بڑے شہر بن غازی سے نکال دیا۔ فوجی حکام نے بتایا کہ خلیفہ حفتار کی قیادت میں لیبیا کی قومی فوج اور اسلامی عسکریت پسندوں کے درمیان سال 2011میں معمر قذافی کے زوال کے بعد ہی جنگ جاری ہے ۔ کمانڈر وانس بخامد نے بتایا کہ فوجوں نے دن بھر جاری رہنے والی جنگ کے بعد پورے خیرابش ضلع پر قبضہ کر لیا ہے ۔ انہوں نے کہا آج کی رات اسلامی عسکریت پسندوںکی خیرابش میں آخری رات ہو گی۔ حفتار نے مئی 2014میں ’آپریشن ڈگنٹی‘مہم کی شروعات کی تھی۔آہستہ آہستہ وہ اسلامی عسکریت پسندوں اور سابق باغیوں پر برتری بناتا گیا۔حفتار مشرقی لیبیا میں حکومت اور پارلیمنٹ کے ساتھ منسلک ہے ۔اپنی پوزیشن کو مضبوط کرنے کے بعد اس نے دارالحکومت طرابلس میں اقوام متحدہ کی تائید والی حکومت کو مسترد کر دیا تھا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں