واٹر ڈرم سے ایئر نیٹ ورک میں چھوٹے شہر شامل ہوں گے

نئی دہلی/یو این آئی/جن چھوٹے شہروں میں ابھی کوئی ہوائی اڈا یا ہوائی ٹریک نہیں ہے انہیں بھی ہوائی نیت ورک سے جوڑنے کیلئے سرکار واٹر ڈرم﴿واٹر پورٹ﴾سے جوڑنے کیلئے متبادل تلاش کررہی ہے ۔ شہری ہوابازی کی وزارت کے ایک سینئر افسر نے بتایا کہ اسپائس جیت اور مہر ایئر نے چھوٹے شہروں میں موجود آبی ذخائر کو واٹر ڈرمس میں ڈیولپ کر کے پانی اور زمین دونوں سے اڑان بھرنے اور اترنے میں اہل ایمفی بین طیاروں کی سروس کی پیشکش کی ہے ۔حکومت اس پر سنجیدگی سے غور خوض کررہی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ آبی ذخائر کی پہچان اور وہاں ایمفی بین طیاروں کی سروس کے امکانات کے اسٹڈی کیلئے تین چار ٹیمیں بنائی گئی ہیں۔ افسر نے بتایا کہ اس سمت میں ابھی کافی کام کرنا باقی ہے ۔دنیا کے کچھ دوسرے ملکوں میں واٹر ڈرموں سے طیاروں کی پروازیں ہوتی ہیں،خاص طور سے سیاحوں کیلئے ۔لیکن یہ ملک میں پہلی بار ہوگا جب واٹر ڈرموں کا استعمال شیڈیول پروازوں کیلئے کیا جائے گا۔ابھی یہ دیکھنا ہے کہ واٹر ڈرم ڈیولپ کرنے کیلئے اور وہا ں سے سروس شروع کرنے کیلئے کس طرح کے انفرا اسٹرکچر کی ضرورت ہوگی۔ انہوں نے بتایا کہ تقریباً 15سے 16واٹر ڈرموں کو شناخت کی گئی ہے ،جہاں طیاروں کی سروس کے امکانات کا اسٹڈی کیا جانا ہے ۔ان میں باندھوں کے پیچھے جمے پانی اور دوسرے آبی ذخائر کا بھی استعمال کیا جاسکتاہے ۔اس کیلئے دو مہینے کا وقت دیا گیا ہے ۔ٹیموںمیں شہری ہوابازی ڈائرکٹوریٹ کے ماہرین بھی شامل ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں