انگلینڈ سیریزکے ہر شعبے میں ہم سے بہتر ثابت ہوا:وراٹ

لندن/ ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان وراٹ کوہلی نے انگلینڈ کیخلاف پانچواں میچ ہارنے کے بعد اپنی ٹیم کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ مہمان ٹیم نے سیریز میں پورے جذبے کے ساتھ کرکٹ کھیلا اور آخری میچ میں لوکیش راہل اور رشبھ پنت کی بہترین اننگز کی بھی تعریف کی۔ ہندوستان کو پانچویں اور آخری ٹسٹ میں انگلینڈ سے 118رن سے شکست کا سامنا کرنا پڑا اور اسی کے ساتھ اس کا انگلینڈ دورہ ایک۔چار کی ٹسٹ سیریز شکست کے ساتھ ختم ہوگیا۔ حالانکہ اس سیریز میں ہندوستانی ٹیم نے کئی مرتبہ بڑی غلطیاں کیں اور ہاتھ آئے موقع کو گنوایا وہیں کپتان نے ٹیم کا مکمل دفاع کیا۔ اوول میدان پر کھیلے گئے پانچویں میچ میں 464رن کے بڑے ہدف کے سامنے ہندوستان کی دوسری اننگز میں صرف
 راہل اور پنت ہی پچ پر ٹک سکے اور ہندوستان کی جیت کی امید کو آخر تک برقرار رکھا۔ راہل نے 149رن اور پنت نے 114رن بنائے ۔ میچ کے بعد کانفرنس میں وراٹ نے دونوں بلے بازوں کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ دونوں نوجوان کھلاڑیوں نے بڑے منچ پر بہترین کرکٹ کھیلا۔ تین اہم وکٹ گرنے کے بعد ان کی اننگز قابل تعریف تھی۔کپتان نے اس سیریز کو ٹسٹ کرکٹ کی بہترین مثال قرار دیتے ہوئے کہا، اگرچہ ہم یہ سیریز ایک ۔چار سے ہارگئے ہیں لیکن یہ حقیقت ہے کہ ہم پورے جذبے کے ساتھ کرکٹ کھیلا تھا۔ پنت اور راہل نے بھی یہ دکھا دیا ہے کہ ان کی ٹیم میں کتنی اہمیت ہے ۔ یہ ٹسٹ سیریز کرکٹ کے پھر سے نئے سرے سے کھڑے ہونے کی مثال ہے ۔ہندوستانی کپتان نے کہا ہم نیتجے کے سلسلے میں بات نہیں کرتے ، لیکن ہم صرف میچ میں کھیلنا چاہتے ہیں۔ ہم انتظار کررہے تھے کہ آگے کیا ہوگا کیونکہ یہ فارمیٹ ایسا ہے جس میں کچھ بھی ہوسکتا ہے ۔ ہم بھلے ہی میچ ہار گئے ہوں لیکن رشبھ کی تعریف کرنی ہوگی جو میدان پر پوری مضبوطی کے ساتھ کھیلیں۔سیریز ہارنے کے سلسلے میں وراٹ نے تسلیم کیا کہ ٹیم کے اچھے موقع گنوائے ۔انہوں نے کہا کہ ہمیں شکست کا دکھ ہے ۔ ہم اس بات کا تجزیہ کریں گے کہ ہم نے کہاں غلطی کی۔ ہمارے پاس اچھے موقع تھے لیکن ہم اس کا فائدہ نہیں اٹھا سکے ۔ جب دونوں ہی ٹیمیں جیتنے کے لئے کھیل رہی ہیں تب چار۔ ایک کے نتیجے سے پتہ چلتا ہے کہ دونوں ہی ٹیموں نے کتی جدوجہد کی اور ایک بھی میچ ڈرا نہیں ہوا۔29 سالہ بلے باز نے انگلینڈ کی تعریف کی اور اس سیریز میں کوئی بھی میچ ڈرا کی طرف نہیں گیا۔ ہم اس اسکور کو صحیح نہیں ٹھہرا رہے ہیں کیونکہ یہ تسلیم کرنا ہوگا کہ انگلینڈ ہر شعبے میں ہم سے بہتر ثابت ہوا ہے ۔ لیکن ہم نے ٹسٹ کرکٹ کے سلسلے میں کافی کچھ سیکھا ہے ۔انہوں نے دونوں ٹیمیں کے مابین فرق کے سلسلے میں کہاکہسب سے بڑا فرق سیم کرین جیسا کھلاڑی رہا جو انگلینڈ ٹیم کا حصہ تھے ۔ انہوں نے بلے اور گیند دونوں سے کمال کا کھیل پیش کیا اور ٹیم کے لئے اہم تعاون کیا۔ ان کے جیسے کھلاڑی میچ کا رخ پلٹ دیتے ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں